It is currently Mon Aug 21, 2017 3:20 pm

All times are UTC + 5 hours




 Page 43 of 43 [ 1702 posts ]  Go to page Previous  1 ... 39, 40, 41, 42, 43
Author Message
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Wed Aug 03, 2016 10:28 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
bohat shuriya Rose Bud


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Aug 04, 2016 12:46 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
ملوں گا خاک ميں اک روز بيج کي مانند
فنا پکار رہي ہے ____ مجھے بقا کيلئے


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Aug 04, 2016 12:58 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
تم سے الفت کے تقاضے نہ نباہے جاتے
ورنہ ہم کو بھی تمنا تھی کہ چاہے جاتے

دل کے ماروں کا نہ کر غم کہ یہ اندوہ نصیب
زخم بھی دل میں نہ ہوتا تو کراہے جاتے

ہم نگاہی کی ہمیں خود بھی کہاں تھی توفیق
کم نگاہی کے لیے عذر نا چاہے جاتے

کاش اے ابرِ بہاری! تیرے بہکے سے قدم
میری امید کے صحرا بھی گاہے جاتے

ہم بھی کیوں دہر کی رفتار سے ہوتے پامال
ہم بھی ہر لغزش مستی کو سراہے جاتے

لذت درد سے آسودہ کہاں دل والے
ہے فقط درد کی حسرت میں کراہے جاتے

دی نہ مہلت ہمیں ہستی نے وفا کی ورنہ
اور کچھ دن غم ہستی سے نبھائے جاتے


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Aug 04, 2016 1:00 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
دیکھ لیتے ہیں اب اس بام کو آتے جاتے
یہ بھی آزار چلا جائے گا جاتے جاتے

دل کے سب نقش تھے ہاتھوں کی لکیروں جیسے
نقشِ پا ہوتے تو ممکن تھا مٹاتے جاتے

تھی کبھی راہ جو ہمراہ گزرنے والی
اب حذر ہوتا ہے اس رات سے آتے جاتے

شہرِ بے مہر کبھی ہم کو بھی مہلت دیتا
ایک دیا ہم بھی کسی رخ سے جلاتے جاتے

پارۂ ابر گریزاں تھے کہ موسم اپنے
دُور بھی رہتے مگر پاس بھی آتے جاتے

ہر گھڑی اک جدا غم ہے جدائی اس کی
غم کی میعاد بھی وہ لے گیا جاتے جاتے

اُ س کے کوچے میں بھی ہو، راہ سے بے راہ نصیرؔ
اتنے آئے تھے تو آواز لگاتے جاتے

نصیر ترابی


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Aug 04, 2016 1:01 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے
ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے

شکوۂ ظلمت شب سے تو کہیں‌بہتر تھا
اپنے حصے کی کوئی شمع جلاتے جاتے

کتنا آساں تھا ترے ہجر میں مرنا جاناں
پھر بھی اک عمر لگی جان سے جاتے جاتے

جشنِ مقتل ہی نہ برپا ہوا ورنہ ہم بھی
پابجولاں ہی سہی ناچتے گاتے جاتے

اس کی وہ جانے اسے پاسِ وفا تھا کہ نہ تھا
تم فرازؔ اپنی طرف سے تو نبھاتے جاتے

احمد فراز


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sun Sep 18, 2016 3:47 pm 
Special Super Dooper Member
User avatar

Joined: Sat Dec 10, 2005 6:13 am
Posts: 43696
Location: London
buhat aala collection
shukria apna integhaab share krne ka
khush rahain :dua



_________________
Image
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sun Oct 30, 2016 12:14 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
خیال و خواب ہُوا برگ و بار کا موسم
بچھڑ گیا تری صُورت، بہار کا موسم
کئی رُتوں سے مرے نیم وا دریچوں میں
ٹھہر گیا ہے ترے انتظار کا موسم
وہ نرم لہجے میں کچھ تو کہے کہ لَوٹ آئے
سماعتوں کی زمیں پر پھوار کا موسم
پیام آیا ہے پھر ایک سروقامت کا
مرے وجود کو کھینچے ہے دار کا موسم
وہ آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے
مرے بدن کو مِلا ہے چنار کا موسم
رفاقتوں کے نئے خواب خُوشنما ہیں مگر
گُزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم
ہَوا چلی تو نئی بارشیں بھی ساتھ آئیں
زمیں کے چہرے پہ آیا نکھار کا موسم
وہ میرا نام لیے جائے اور میں اُس کا نام
لہو میں گُونج رہا ہے پکار کا موسم
قدم رکھے مری خُوشبو کہ گھر کو لَوٹ آئے
کوئی بتائے مُجھے کوئے یار کا موسم
وہ روز آ کے مجھے اپنا پیار پہنائے
مرا غرور ہے بیلے کے ہار کا موسم
ترے طریقِ محبت پہ با رہا سوچا
یہ جبر تھا کہ ترے اختیار کا موسم
پروین شاکر


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sun Oct 30, 2016 12:17 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
بزم سے جب نگار اٹھتا ہے
میرے دل سے غبار اٹھتا ہے
میں جو بیٹھا ہوں تو وہ خوش قامت
دیکھ لو! بار بار اٹھتا ہے
تیری صورت کو دیکھ کر مری جاں
خود بخود دل میں پیار اٹھتا ہے
اس کی گُل گشت سے روش بہ روش
رنگ ہی رنگ یار اٹھتا ہے
تیرے جاتے ہی اس خرابے سے
شورِ گریہ ہزار اٹھتا ہے
کون ہے جس کو جاں عزیز نہیں؟
لے ترا جاں نثار اٹھتا ہے
صف بہ صف آ کھڑے ہوئے ہیں غزال
دشت سے خاکسار اٹھتا ہے
ہے یہ تیشہ کہ ایک شعلہ سا
بر سرِ کوہسار اٹھتا ہے
کربِ تنہائی ہے وہ شے کہ خدا
آدمی کو پکار اٹھتا ہے
تو نے پھر کَسبِ زَر کا ذکر کیا
کہیں ہم سے یہ بار اٹھتا ہے
لو وہ مجبورِ شہر صحرا سے
آج دیوانہ وار اٹھتا ہے
اپنے ہاں تو زمانے والوں کا
روز ہی اعتبار اٹھتا ہے
جون اٹھتا ہے، یوں کہو، یعنی
میر و غالب کا یار اٹھتا ہے
جون ایلیا


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sun Oct 30, 2016 12:26 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
شبِ وصال پہ لعنت شبِ قرار پہ تف
ترے خیال پہ تھو تیرے انتظار پہ تف
وہ پاؤں سو گئے جو بے ارادہ اٹھتے تھے
طواف کوچہء جاناں پہ، کوئے یار پہ تف
تجھ ایسے پھول کی خواہش پہ بار ہا لعنت
بجائے خون کے رکھتا ہوں نوکِ خار پہ تف
دلِ تباہ کو تجھ سے بڑی شکایت ہے
اے میرے حسنِ نظر ! تیرے اعتبار پہ تف
پہنچ سکا نہیں اس تک جو میرے زخم کا نور
چراغ خون پہ تھو سینہء فگار پہ تف
ہیں برگِ خشک سی شکنیں خزاں بکف بستر
مرے مکان میں ٹھہری ہوئی بہار پہ تف
کسی فریب سے نکلا ہے جا مٹھائی بانٹ
ترے ملالِ تری چشم اشکبار پہ تف
تجھے خبر ہی نہیں ہے کہ مرگیا ہوں میں
اے میرے دوست ترے جیسے غمگسار پہ تف
یونہی بکھیرتا رہتا ہے دھول آنکھوں میں
ہوائے تیز کے اڑتے ہوئے غبار پہ تف
خود آپ چل کے مرے پاس آئے گا کعبہ
مقامِ فیض پہ بنتی ہوئی قطار پہ تف
حیات قیمتی ہے خواب کے دریچوں سے
رہِ صلیب پہ لعنت، فراز دار پہ تف
صدا ہو صوتِ سرافیل تو مزہ بھی ہے
گلے کے بیچ میں اٹکی ہوئی پکار پہ تف
جسے خبر ہی نہیں ہے پڑوسی کیسے ہیں
نمازِ شام کی اُس عاقبت سنوار پہ تف
مری گلی میں اندھیرا ہے کتنے برسوں سے
امیرِ شہر! ترے عہدِ اقتدار پہ تف
ترے سفید محل سے جو پے بہ پے ابھرے
ہزار بار انہی زلزلوں کی مار پہ تف
ترے لباس نے دنیا برہنہ تن کر دی
ترے ضمیر پہ تھو، تیرے اختیار پہ تف
سنا ہے چادرِ زہرا کو بیچ آیا ہے
جناب شیخ کی دستارِ بد قمار پہ تف
تُو ماں کی لاش سے اونچا دکھائی دیتا ہے
ترے مقام پہ لعنت ترے وقار پہ تف
مرے گھرانے کی سنت یہی غریبی ہے
ترے خزانے پہ تھو مالِ بے شمار پہ تف
یہی دعا ہے ترا سانپ پر قدم آئے
ہزار ہا ترے کردارِ داغ دار پہ تف
کسی بھی اسم سے یہ ٹوٹتا نہیں منصور
فسردگی کے سلگتے ہوئے حصار پہ تف
منصور آفاق


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sun Oct 30, 2016 12:38 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
جہاں کی حقیقت کی کس کو خبر ہے

فریبِ نظر تھی، فریبِ نظر ہے

یہی پھول کی زیست کا ماحصل ہے

کہ اس کا تبسم ہی اس کی اجل ہے

نہ سمجھو کہ چشمِ حسیں سرمگیں ہے

نہیں، قبر کی تیرگی کی امیں ہے

یہ کیا کہہ رہے ہو کہ ندی رواں ہے

سمندر سے پوچھو، کہاں تھی، کہاں ہے

نہ سمجھو کہ ہے کیف پرور یہ نغمہ

شکن ہے ہوا کی جبیں پر یہ نغمہ

کہاں دھڑکنیں ہیں دلِ زار کی یہ

صدائیں ہیں اک ٹوٹتے تار کی یہ

یہ ہستی کا دریا بہا جا رہا ہے

ہم آہنگ سیلِ فنا جا رہا ہے

پھنسے کچھ انوکھے قرینوں میں ہیں ہم

حبابوں کے نازک سفینوں میں ہیں ہم

یہ کیا ہے، یہ کیوں ہے، خبر کیا، خبر کیا

مرے تیرہ ادراک کی ہو سحر کیا!

مری بزمِ دل میں نہیں روشنی کیوں؟

ہے بےصید میری نگہ کی انی کیوں؟

یہ دنیا ہے میری کہ مرقد ہے میرا؟

یہاں بھی اندھیرا، وہاں بھی اندھیرا
مجید امجد


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sun Oct 30, 2016 12:46 am 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
کیا خبر صبح کے ستارے کو

ہے اسے فرصتِ نظر کتنی

پھیلتی خوشبوؤں کو کیا معلوم

ہے انہیں مہلتِ سفرکتنی

برقِ بےتاب کو خبر نہ ہوئی

کہ ہے عمرِ دمِ شرر کتنی

کبھی سوچا نہ پینے والے نے

جام میں مے تو ہے مگر کتنی

دیکھ سکتی نہیں مآلِ بہار

گرچہ نرگس ہے دیدہ ور کتنی

جانے کیا زندگی کی جاگتی آنکھ

ہو گئی اس کی شب بسر کتنی

شمعِ خود سوز کو پتہ نہ چلا

دور ہے منزلِ سحر کتنی

مسکراتی کلی کو اس سے غرض

کہ ہے عمر اس کی مختصر کتنی

جینے والوں کو کام جینے سے

زندگی کا نظام جینے سے
مجید امجد


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Dec 15, 2016 1:56 pm 
Moderator
User avatar

Joined: Thu Jan 21, 2010 2:47 pm
Posts: 8830
Location: apney dil ky dil mein
Blessed Adv wrote:
بزم سے جب نگار اٹھتا ہے
میرے دل سے غبار اٹھتا ہے
میں جو بیٹھا ہوں تو وہ خوش قامت
دیکھ لو! بار بار اٹھتا ہے
تیری صورت کو دیکھ کر مری جاں
خود بخود دل میں پیار اٹھتا ہے
اس کی گُل گشت سے روش بہ روش
رنگ ہی رنگ یار اٹھتا ہے
تیرے جاتے ہی اس خرابے سے
شورِ گریہ ہزار اٹھتا ہے
کون ہے جس کو جاں عزیز نہیں؟
لے ترا جاں نثار اٹھتا ہے
صف بہ صف آ کھڑے ہوئے ہیں غزال
دشت سے خاکسار اٹھتا ہے
ہے یہ تیشہ کہ ایک شعلہ سا
بر سرِ کوہسار اٹھتا ہے
کربِ تنہائی ہے وہ شے کہ خدا
آدمی کو پکار اٹھتا ہے
تو نے پھر کَسبِ زَر کا ذکر کیا
کہیں ہم سے یہ بار اٹھتا ہے
لو وہ مجبورِ شہر صحرا سے
آج دیوانہ وار اٹھتا ہے
اپنے ہاں تو زمانے والوں کا
روز ہی اعتبار اٹھتا ہے
جون اٹھتا ہے، یوں کہو، یعنی
میر و غالب کا یار اٹھتا ہے
جون ایلیا


wah lajawab intekhab blessed, always be blessed :buke: :buke:



_________________
Image

یاد کراں میں پیار سجن دا، رؤون نین وچارے
دل نوں کنج تسلی دیواں، ٹٹ گئے سب سہارے
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Fri Feb 17, 2017 7:39 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
آیتیں سچ ھیں مگر تُو نہیں سچّا مُلّا
تیری تشریح غلط ھے،مِرا قُرآن نہیں
دین کو باپ کی جاگیر سمجھنے والے
تجھ سوا اور یہاں کوئی مسلمان نہیں ؟؟؟

تُو کوئی آج کا دشمن ھے ؟؟ بتاتا ھوں تجھے
تیری تاریخ ابھی یاد دلاتا ھوں تجھے
کون تھے مسجدِ ضرّار بنانے والے ؟؟
تہمتیں خاتمِ مُرسل پہ لگانے والے ؟
آستینوں میں بُتوں کو وہ چُھپانے والے ؟
یاد آیا تجھے ؟؟ او ظلم کے ڈھانے والے

لاکھ فتنے تری پُر فتنہ زباں سے اُٹھّے
تُو اُدھر چیخا،اِدھر لاشے یہاں سے اُٹھّے
تُو جہاں پیر دھرے،امن وہاں سے بھاگے
دوزخی دھول ترے زورِ بیاں سے اُٹھّے
بھیس مسلم کا ،زباں کوفی و شامی تیری
داعشی فکر سے ھے روح جذامی تیری

تُو نے قُرآن پڑھا ؟؟ پڑھ کے گنوایا تُو نے
درس میں بچّوں کو بارود پڑھایا تُو نے
رمزِ سجدہ کو سیاست سے مِلایا تُو نے
لوگ دشمن کے لئے سوچ نہیں سکتے جسے
کارِ بد بخت وہ بچّوں سے کرایا تُو نے

آج دنیا کو جو مسلم کا بھروسہ کوئی نئیں
اِس اذیّت کا سبب تیرے علاوہ کوئی نئیں
تری تفسیرِ غلط فکر نے وہ زخم دئیے
جن کا برسوں تو کُجا،صدیوں مداوا کوئی نئیں

ھُوک اُٹھتی ھے تو سینے کی طرف دیکھتا ھوں
بار بار آج مدینے کی طرف دیکھتا ھوں
دیکھتا ھوں کہ مِرا گنبدِ خضریٰ والا
میرا آقا مِرا مولا مِرا شاہِ اعلیٰ
شافعِ روزِ جزا ،عرضِِ گدا سنتا ھے
جس کے ھونے سے یقیں ھے کہ خدا سنتا ھے
خیر کی ایک چمک ھے جو علی کہتی ھے
رات ھے ؟؟ رات ھمیشہ تو نہیں رہتی ھے ... !!!

علی زریون


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Fri Feb 17, 2017 7:49 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
آیتیں سچ ھیں مگر تُو نہیں سچّا مُلّا
تیری تشریح غلط ھے،مِرا قُرآن نہیں
دین کو باپ کی جاگیر سمجھنے والے
تجھ سوا اور یہاں کوئی مسلمان نہیں ؟؟؟

تُو کوئی آج کا دشمن ھے ؟؟ بتاتا ھوں تجھے
تیری تاریخ ابھی یاد دلاتا ھوں تجھے
کون تھے مسجدِ ضرّار بنانے والے ؟؟
تہمتیں خاتمِ مُرسل پہ لگانے والے ؟
آستینوں میں بُتوں کو وہ چُھپانے والے ؟
یاد آیا تجھے ؟؟ او ظلم کے ڈھانے والے

لاکھ فتنے تری پُر فتنہ زباں سے اُٹھّے
تُو اُدھر چیخا،اِدھر لاشے یہاں سے اُٹھّے
تُو جہاں پیر دھرے،امن وہاں سے بھاگے
دوزخی دھول ترے زورِ بیاں سے اُٹھّے
بھیس مسلم کا ،زباں کوفی و شامی تیری
داعشی فکر سے ھے روح جذامی تیری

تُو نے قُرآن پڑھا ؟؟ پڑھ کے گنوایا تُو نے
درس میں بچّوں کو بارود پڑھایا تُو نے
رمزِ سجدہ کو سیاست سے مِلایا تُو نے
لوگ دشمن کے لئے سوچ نہیں سکتے جسے
کارِ بد بخت وہ بچّوں سے کرایا تُو نے

آج دنیا کو جو مسلم کا بھروسہ کوئی نئیں
اِس اذیّت کا سبب تیرے علاوہ کوئی نئیں
تری تفسیرِ غلط فکر نے وہ زخم دئیے
جن کا برسوں تو کُجا،صدیوں مداوا کوئی نئیں

ھُوک اُٹھتی ھے تو سینے کی طرف دیکھتا ھوں
بار بار آج مدینے کی طرف دیکھتا ھوں
دیکھتا ھوں کہ مِرا گنبدِ خضریٰ والا
میرا آقا مِرا مولا مِرا شاہِ اعلیٰ
شافعِ روزِ جزا ،عرضِِ گدا سنتا ھے
جس کے ھونے سے یقیں ھے کہ خدا سنتا ھے
خیر کی ایک چمک ھے جو علی کہتی ھے
رات ھے ؟؟ رات ھمیشہ تو نہیں رہتی ھے ... !!!

علی زریون


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Fri Feb 17, 2017 10:40 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
شورش ـ روزگار میں ہم تم
روز مرتے ہیں روز جیتے ہیں
آؤ دو چار پل کہیں مل کے
گپ لگاتے ہیں چائے پیتے ہیں

اسلم کولسری


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Jul 20, 2017 9:12 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
۔کھیل دونوں کا چلے، تین کا دانہ نہ پڑے
سیڑھیاں آتی رہیں، سانپ کا خانہ نہ پڑے
۔
دیکھ معمار! پرندے بھی رہیں، گھر بھی بنے
نقشہ ایسا ہو کوئی پیڑ گرانا نہ پڑے
۔
اس تعلق سے نکلنے کا کوئی راستہ دے
اس پہاڑی پہ بھی بارود لگانا نہ پڑے
۔
نم کی ترسیل سے آنکھوں کی حرارت کم ہو
سرد خانوں میں کوئی خواب پرانا نہ پڑے
۔
ربط کی خیر ہے بس تیری انا بچ جائے
اس طرح جا کہ تجھے لوٹ کے آنا نہ پڑے
۔
ہجر ایسا ہو کہ چہرے پہ نظر آ جائے
زخم ایسا ہو کہ دِکھ جائے، دِکھانا نہ پڑے


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Thu Jul 20, 2017 9:14 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
ﻣُﺤﺒﺖ ﯾﺎﺩ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ
ﭘﻠﭧ ﮐﺮ ﻟُﻮﭨﻨﺎ ﺳﯿﮑﮭﻮ !
ﮔِﺮﺍ ﮐﺮ ﺑُﺖ ﺍﻧﺎﺅﮞ ﮐﺎ
ﺍَﻧﺎ ﮐﻮ ﺗﻮﮌﻧﺎ ﺳﯿﮑﮭﻮ !
ﺗﻌﻠﻖ ﭨﻮﭦ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ
!ﺍُﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﺟﻮﮌﻧﺎ ﺳﯿﮑﮭﻮ


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Fri Jul 21, 2017 9:44 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
کچھ کہے بنا اکثر بولتی ہیں آنکھیں بھی
گفتگو کے سب لمحےحرف گر نہیں ہوتے


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sat Jul 22, 2017 9:18 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
بہتر ہے خود رفو گری سیکھوں کہ آج تو
گھاؤ کھلے ہی چھوڑ کے وہ چارہ گر گیا!


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sat Jul 29, 2017 10:26 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
سمندر پار ہوتی جا رہی ہے
دُعا ، پتوار ہوتی جا رہی ہے
دریچے اب کُھلے ملنے لگے ہیں
فضا ہموار ہوتی جا رہی ہے
کئی دن سے مرے اندر کی مسجد
خدا بیزار ہوتی جا رہی ہے
مسائل، جنگ، خوشبو، رنگ، موسم
غزل اخبار ہوتی جا رہی ہے
بہت کانٹوں بھری دنیا ہے لیکن
گلے کا ہار ہوتی جا رہی ہے
کٹی جاتی ہیں سانسوں کی پتنگیں
ہوا تلوار ہوتی جا رہی ہے
کوئی گنبد ہے دروازے کے پیچھے
صدا بیکار ہوتی جا رہی ہے
گلے کچھ دوست آ کر مل رہے ہیں
چُھری پر دھار ہوتی جا رہی ہے


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sat Jul 29, 2017 10:27 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
عطا بے فیض لوگوں کا کبھی برتن نہیں
بھرتا
گزارا کرنے والوں کا گزارا ہونے لگتا ہے


Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Blessed Adv collection!!!
PostPosted: Sat Jul 29, 2017 10:31 pm 
Super Member
User avatar

Joined: Wed Jun 15, 2011 7:06 pm
Posts: 1510
تہمتیں تو لگتی ہیں
روشنی کی خواہش میں
گھر سے باہر آنے کی کُچھ سزا تو ملتی ہے
لوگ لوگ ہوتے ہیں
ان کو کیا خبر جاناں !
آپ کے اِرادوں کی خوبصورت آنکھوں میں
بسنے والے خوابوں کے رنگ کیسے ہوتے ہیں
دل کی گود آنگن میں پلنے والی باتوں کے
زخم کیسے ہوتے ہیں
کتنے گہرے ہوتے ہیں
کب یہ سوچ سکتے ہیں
ایسی بے گناہ آنکھیں
گھر کے کونے کھدروں میں چھُپ کے کتنا روتی ہیں
پھر بھی یہ کہانی سے
اپنی کج بیانی سے
اس قدر روانی سے داستان سناتے ہیں
اور یقین کی آنکھیں
سچ کے غمزدہ دل سے لگ کے رونے لگتی ہیں
تہمتیں تو لگتی ہیں
روشنی کی خواہش میں
تہمتوں کے لگنے سے
دل سے دوست کو جاناں
اب نڈھال کیا کرنا
تہمتوں سے کیا ڈرنا


Offline
 Profile  
 
Display posts from previous:  Sort by  
 Page 43 of 43 [ 1702 posts ]  Go to page Previous  1 ... 39, 40, 41, 42, 43

All times are UTC + 5 hours


Who is online

Users browsing this forum: Yahoo [Bot] and 3 guests


You cannot post new topics in this forum
You cannot reply to topics in this forum
You cannot edit your posts in this forum
You cannot delete your posts in this forum
You cannot post attachments in this forum

Jump to: