It is currently Tue Dec 12, 2017 1:31 pm

All times are UTC + 5 hours




 Page 10 of 10 [ 390 posts ]  Go to page Previous  1 ... 6, 7, 8, 9, 10
Author Message
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Thu May 24, 2012 5:07 pm 
Junior Moderator
User avatar

Joined: Sat Nov 26, 2011 1:30 pm
Posts: 15749
Location: ĹŐVĔ ĞĂŔĎĔŃ :)
bht hi haseen nazm he :b)b:
lajawab.. bht pasand ayi

مگر ۔۔۔۔ یہ آج کی بارش
مجھے بے کل سی کرتی ھے
تمہاری یاد آتی ھے ۔۔۔
میں خود سے ھار بیٹھی ھوں
سنو ! میں آج کہتی ھوں
میں اُس پل بھی تمہاری تھی
میں اِس پل بھی تمہاری ھوں


khush rahiye :dua



_________________
Image

Dushman k Chakke Chhura den Hum India wale
Ungli pe sab ko nacha den Hum India wale
Hidden: show
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Mon May 28, 2012 4:07 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
ذکر حسن و جمال کرتے ہیں
فکر ہجر و وصال کرتے ہیں

کام اپنا رہا جواب دہی
کب کوئی ہم سوال کرتے ہیں

جو گزرتی ہے دل پہ سہتے ہیں
ہم کہاں عرض حال کرتے ہیں

شہر نفرت میں ہجر کی رت میں
جی رہے ہیں کمال کرتے ہیں

دل کی مٹی میں درد بونا ہے
تجربہ اب کے سال کرتے ہیں

دار پر چڑھ کے ساز الفت ہر
ہم دوانے دھمال کرتے ہیں

عشق کا نام بھی نہ لیں عارف
وہ جو فکر مآ ل کرتے ہیں



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Fri Jun 22, 2012 4:05 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ آئے کیوں؟
روئیں گے ہم ہزار بار ،کوئی ہمیں ستائے کیوں؟

دَیر نہیں، حرم نہیں، در نہیں، آستاں نہیں
بیٹھے ہیں رہ گزر پہ ہم، غیر ہمیں اُٹھائے کیوں؟

جب وہ جمالِ دل فروز، صورتِ مہرِ نیم روز
آپ ہی ہو نظارہ سوز، پردے میں منہ چھپائے کیوں؟

دشنۂ غمزہ جاں ستاں، ناوکِ ناز بے پناہ
تیرا ہی عکس رُخ سہی، سامنے تیرے آئے کیوں؟

قیدِ حیات و بندِ غم اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں؟

حسن اور اس پہ حسنِ ظن، رہ گئی بوالہوس کی شرم
اپنے پہ اعتماد ہے غیر کو آزمائے کیوں؟

واں وہ غرورِ عزّ و ناز، یاں یہ حجابِ پاس وضع
راہ میں ہم ملیں کہاں، بزم میں وہ بلائے کیوں؟

ہاں وہ نہیں خدا پرست، جاؤ وہ بے وفا سہی
جس کو ہوں دین و دل عزیز اس کی گلی میں جائے کیوں؟

غالب خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں
روئیے زار زار کیا؟ کیجئے ہائے ہائے کیوں؟



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Fri Jun 22, 2012 4:09 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
آنکھوں میں‌تیری بزمِ تماشا لئے ہوئے
جنّت میں بھی ہوں جنّتِ دنیا لئے ہوئے

پاسِ ادب میں‌جوشِ تمنّا لئے ہوئے
میں بھی ہو ں اِک حباب میں دریا لئے ہوئے

کس طرح حسنِ دوست ہے بے پردہ آشکار
صد ہا حجابِ صورت و معنےٰ لئے ہوئے

ہے آرزو کہ آئے قیامت ہزار بار
فتنہ طرازیء قدِ رعنا لئے ہوئے

طوفانِ تازہ اور پریشاں غبارِ قیس
شانِ نیازِ محملِ لیلےٰ لئے ہوئے

پھر دل میں التفات ہوا اُن کے جاگزیں
اِک طرزِ خاصِ رنجشِ بیجا لئے ہوئے

پھر ان لبوں پہ موجِ تبسّم ہوئی عیاں
سامانِ جوشِ رقصِ تمنّا لئے ہوئے

صوفی کو ہے مشاہدہء حق کا ادعا
صد ہا حجابِ دیدہء بینا لئے ہوئے

صد ہا تو لطفِ مے سے بھی محروم رہ گئے
یہ امتیازِ ساغر و مینا لئے ہوئے

مجھ کو نہیں ہے تابِ خلش ہائے روزگار
دل ہے نزاکتِ غمِ لیلیٰ لئے ہوئے

تُو برقِ حسن اور تجلیّ سے یہ گریز
میں خاک اور ذوقِ تماشا لئے ہوئے

افتادگانِ عشق نے سَر اَب تو رکھ دیا
اٹھیں گے بھی تو نقشِ کفِ پا لئے ہوئے

رگ رگ میں اور کچھ نہ رہا جُز خیالِ دوست
اس شوخ کو ہوں آج سراپا لئے ہوئے

دل مبتلا و مائلِ تمکینِ اِتّقا!
جامِ شرابِ نرگسِ رسوا لئے ہوئے

سرمایہ حیات ہے حرمانِ عاشقی
ہے ساتھ ایک صورتِ زیبا لئے ہوئے

جوشِ جنوں میں چھوٹ گیا آستانِ یار
روتے ہیں‌منہ پہ دامنِ صحرا لئے ہوئے

اصغر ہجومِ دردِ غریبی میں اُس کی یاد
آئی ہے اِک طلسمِ تمنّا لئے ہوئے

اصغر گونڈوی


Last edited by Tifl e Maktab on Fri Jun 22, 2012 4:11 pm, edited 1 time in total.


_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Fri Jun 22, 2012 4:10 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
ملے غم سے اپنے فرصت تو سناؤں وہ فسانہ
کہ ٹپک پڑے نظر سے مئے عشرتِ شبانہ

یہی زندگی مصیبت، یہی زندگی مسرّت
یہی زندگی حقیقت یہی زندگی فسانہ

کبھی درد کی تمنّا کبھی کوششِ مداوا
کبھی بجلیوں کی خواہش کبھی فکرِ آشیانہ

میرے قہقہوں کے زد پر کبھی گردشیں جہاں کی
میری آنسوؤں کی رو میں کبھی تلخئی زمانہ

ابھی میں ہوں تجھ سے نالاں کبھی مجھ سے تو پریشاں
کبھی میں تیرا ہدف ہوں کبھی تو میرا نشانہ

جسے پا سکا نہ زاہد جسے چھو سکا نہ صوفی
وہی تیر چھیڑتا ہے میرا سوزِ شاعرانہ

معین احسن جذبی



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Fri Jun 22, 2012 4:12 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
بے قبا جسموں پہ فرسودہ ردائیں تان دے
اس شکستہ دور میں اپنی کوئی پہچان دے

میں ہوں صدیوں سے شکستہ روشنی کے درمیاں
آنے والی صبح کا مجھ کو کوئی امکان دے

سب ہیں اپنے آپ کو پہچاننے میں منہمک
غیر ممکن ہے یہاں کوئی تیری پہچان دے

یا مٹا دے جسم و جاں سے روح کی وابستگی
یا میری خانہ بدوشی کو کوئی ایوان دے

آندھیاں آئیں گی تو گرجائیں گے بوڑھے شجر
اگ رہے ہیں جو نئے پودے تو ان پر دھیان دے

روکھی سوکھی کھا کے میں زندہ ہوں اے حسیر
میں نہیں کہتا مجھے سونے کی کوئی کان دے

حسیر نوری



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Fri Jun 22, 2012 6:03 pm 
Moderator
User avatar

Joined: Sun Feb 14, 2010 6:59 pm
Posts: 14280
Tifl e Maktab wrote:
بے قبا جسموں پہ فرسودہ ردائیں تان دے
اس شکستہ دور میں اپنی کوئی پہچان دے

میں ہوں صدیوں سے شکستہ روشنی کے درمیاں
آنے والی صبح کا مجھ کو کوئی امکان دے

سب ہیں اپنے آپ کو پہچاننے میں منہمک
غیر ممکن ہے یہاں کوئی تیری پہچان دے

یا مٹا دے جسم و جاں سے روح کی وابستگی
یا میری خانہ بدوشی کو کوئی ایوان دے

آندھیاں آئیں گی تو گرجائیں گے بوڑھے شجر
اگ رہے ہیں جو نئے پودے تو ان پر دھیان دے

روکھی سوکھی کھا کے میں زندہ ہوں اے حسیر
میں نہیں کہتا مجھے سونے کی کوئی کان دے

حسیر نوری


wah buhat khub intikhab hai mashallah........ :b)b: :b)b: :b)b: :)O :)O :)O :)O :)O



_________________
Image
Image



میرے صبر پر کوئی اجر کیا، میری دوپہر پر یہ ابر کیوں؟
مجھے اوڑھنے دے اذیتیں، میری عادتیں نہ خراب کر
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Sat Jun 23, 2012 12:32 am 
EverGreen Member
User avatar

Joined: Sun Jun 19, 2005 10:34 pm
Posts: 4033
Location: England
Tifl e Maktab wrote:
ملے غم سے اپنے فرصت تو سناؤں وہ فسانہ
کہ ٹپک پڑے نظر سے مئے عشرتِ شبانہ

یہی زندگی مصیبت، یہی زندگی مسرّت
یہی زندگی حقیقت یہی زندگی فسانہ

کبھی درد کی تمنّا کبھی کوششِ مداوا
کبھی بجلیوں کی خواہش کبھی فکرِ آشیانہ

میرے قہقہوں کے زد پر کبھی گردشیں جہاں کی
میری آنسوؤں کی رو میں کبھی تلخئی زمانہ

ابھی میں ہوں تجھ سے نالاں کبھی مجھ سے تو پریشاں
کبھی میں تیرا ہدف ہوں کبھی تو میرا نشانہ

جسے پا سکا نہ زاہد جسے چھو سکا نہ صوفی
وہی تیر چھیڑتا ہے میرا سوزِ شاعرانہ

معین احسن جذبی


behtreen kalaam share kiya aap ne.....tamam ghazliyaat .......be-had umda.......ye ghazal hamain bhut zayada pasand hai............ :)


قیدِ حیات و بندِ غم اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں؟

ہاں وہ نہیں خدا پرست، جاؤ وہ بے وفا سہی
جس کو ہوں دین و دل عزیز اس کی گلی میں جائے کیوں؟

bohut khoob.......!

meena



_________________
Image

Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Sun Jun 24, 2012 7:49 am 
Most Active Member

Joined: Sat Sep 05, 2009 6:09 am
Posts: 2718
Tifl e Maktab wrote:
دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ آئے کیوں؟
روئیں گے ہم ہزار بار ،کوئی ہمیں ستائے کیوں؟

دَیر نہیں، حرم نہیں، در نہیں، آستاں نہیں
بیٹھے ہیں رہ گزر پہ ہم، غیر ہمیں اُٹھائے کیوں؟

جب وہ جمالِ دل فروز، صورتِ مہرِ نیم روز
آپ ہی ہو نظارہ سوز، پردے میں منہ چھپائے کیوں؟

دشنۂ غمزہ جاں ستاں، ناوکِ ناز بے پناہ
تیرا ہی عکس رُخ سہی، سامنے تیرے آئے کیوں؟

قیدِ حیات و بندِ غم اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں؟

حسن اور اس پہ حسنِ ظن، رہ گئی بوالہوس کی شرم
اپنے پہ اعتماد ہے غیر کو آزمائے کیوں؟

واں وہ غرورِ عزّ و ناز، یاں یہ حجابِ پاس وضع
راہ میں ہم ملیں کہاں، بزم میں وہ بلائے کیوں؟

ہاں وہ نہیں خدا پرست، جاؤ وہ بے وفا سہی
جس کو ہوں دین و دل عزیز اس کی گلی میں جائے کیوں؟

غالب خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں
روئیے زار زار کیا؟ کیجئے ہائے ہائے کیوں؟

ASAD ULLAH KHAN GHALIB
ki lazawal shairy
:)O :)O :)O :)O :)O



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jun 27, 2012 9:46 am 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
Image



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jun 27, 2012 9:49 am 
Special Super Dooper Member
User avatar

Joined: Tue Sep 27, 2005 8:41 am
Posts: 46580
bohat khoob, bohat umda asad ji :)O



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Thu Jul 12, 2012 3:24 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
مسجد کے زیرِ سایہ خرابات چاہیے
بھَوں پاس آنکھ قبلۂ حاجات چاہیے
عاشق ہوئے ہیں آپ بھی ایک اور شخص پر
آخر ستم کی کچھ تو مکافات چاہیے
دے داد اے فلک! دلِ حسرت پرست کی*
ہاں کچھ نہ کچھ تلافیِ مافات چاہیے
سیکھے ہیں مہ رخوں کے لیے ہم مصوّری
تقریب کچھ تو بہرِ ملاقات چاہیے
مے سے غرض نشاط ہے کس رو سیاہ کو
اک گونہ بیخودی مجھے دن رات چاہیے
ہے رنگِ لالہ و گل و نسریں جدا جدا
ہر رنگ میں بہار کا اثبات چاہیے
ق
سر پاۓ خم پہ چاہیے ہنگامِ بے خودی
رو سوۓ قبلہ وقتِ مناجات چاہیے
یعنی بہ حسبِ گردشِ پیمانۂ صفات
عارف ہمیشہ مستِ مئے ذات چاہیے
نشو و نما ہے اصل سے غالب فروع کو
خاموشی ہی سے نکلے ہے جو بات چاہیے



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Mon Jul 16, 2012 7:51 pm 
Moderator
User avatar

Joined: Sun Feb 14, 2010 6:59 pm
Posts: 14280
Tifl e Maktab wrote:
مسجد کے زیرِ سایہ خرابات چاہیے
بھَوں پاس آنکھ قبلۂ حاجات چاہیے
عاشق ہوئے ہیں آپ بھی ایک اور شخص پر
آخر ستم کی کچھ تو مکافات چاہیے
دے داد اے فلک! دلِ حسرت پرست کی*
ہاں کچھ نہ کچھ تلافیِ مافات چاہیے
سیکھے ہیں مہ رخوں کے لیے ہم مصوّری
تقریب کچھ تو بہرِ ملاقات چاہیے
مے سے غرض نشاط ہے کس رو سیاہ کو
اک گونہ بیخودی مجھے دن رات چاہیے
ہے رنگِ لالہ و گل و نسریں جدا جدا
ہر رنگ میں بہار کا اثبات چاہیے
ق
سر پاۓ خم پہ چاہیے ہنگامِ بے خودی
رو سوۓ قبلہ وقتِ مناجات چاہیے
یعنی بہ حسبِ گردشِ پیمانۂ صفات
عارف ہمیشہ مستِ مئے ذات چاہیے
نشو و نما ہے اصل سے غالب فروع کو
خاموشی ہی سے نکلے ہے جو بات چاہیے


buhat khub intikhab hai subhanallah....... :b)b: :b)b: :)O :)O :)O :)O



_________________
Image
Image



میرے صبر پر کوئی اجر کیا، میری دوپہر پر یہ ابر کیوں؟
مجھے اوڑھنے دے اذیتیں، میری عادتیں نہ خراب کر
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jul 18, 2012 1:36 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
.
.
.
اس نے سکوتِ شب میں بھی اپنا پیام رکھ دیا
ہجر کی رات بام پر ماہِ تمام رکھ دیا

آمدِ دوست کی نوید کوئے وفا میں عام تھی
میں نے بھی اک چراغ سا دل سرِ شام رکھ دیا

دیکھو یہ میرے خواب تھے دیکھو یہ میرے زخم ہیں
میں نے تو سب حسابِ جاں برسرِ عام رکھ دیا

اس نے نظر نظر میں ہی ایسے بھلے سخن کہے
میں نے تو اس کے پاؤں میں سارا کلام رکھ دیا

شدتِ تشنگی میں بھی غیرتِ مے کشی رہی
اس نے جو پھیر لی نظر میں‌نے بھی جام رکھ دیا

اب کے بہار نے بھی کیں ایسی شرارتیں کہ بس
کبکِ دری کی چال میں تیرا خرام رکھ دیا

جو بھی ملا اسی کا دل حلقہ بگوشِ یار تھا
اس نے تو سارے شہر کو کر کے غلام رکھ دیا

اور فراز چاہئیں کتنی محبتیں تجھے
ماؤں نے تیرے نام پر بچوں کا نام رکھ دیا



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Mon Jul 23, 2012 11:23 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
.
.
.
زندگی جب بھی تیری بزم میں لاتی ہے ہمیں
یہ زمیں چاند سے بہتر نظر آتی ہے ہمیں

سرخ پھولوں سے مہک اٹھتی ہیں دل کی راہیں
دن ڈھلے یوں تیری آواز بلاتی ہے ہمیں

یاد تیری ، کبھی دستک ، کبھی سرگوشی سے
رات کے پچھلے پہر روز جگاتی ہے ہمیں

ہر ملاقات کا انجام جدائی کیوں ہے ؟
اب تو ہر وقت یہی بات ستاتی ہے ہمیں



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jul 25, 2012 2:20 am 
EverGreen Member
User avatar

Joined: Sun Jun 19, 2005 10:34 pm
Posts: 4033
Location: England
Tifl e Maktab wrote:
.
.
.
زندگی جب بھی تیری بزم میں لاتی ہے ہمیں
یہ زمیں چاند سے بہتر نظر آتی ہے ہمیں

سرخ پھولوں سے مہک اٹھتی ہیں دل کی راہیں
دن ڈھلے یوں تیری آواز بلاتی ہے ہمیں

یاد تیری ، کبھی دستک ، کبھی سرگوشی سے
رات کے پچھلے پہر روز جگاتی ہے ہمیں

ہر ملاقات کا انجام جدائی کیوں ہے ؟
اب تو ہر وقت یہی بات ستاتی ہے ہمیں


ye intikhaab bohut khoobsurat hai........... :)

meena



_________________
Image

Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jul 25, 2012 10:38 am 
Special Super Dooper Member
User avatar

Joined: Tue Sep 27, 2005 8:41 am
Posts: 46580
aik hasiin intekhab asad ji :buke:



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Sat Jul 28, 2012 9:59 pm 
Most Active Member

Joined: Sat Sep 05, 2009 6:09 am
Posts: 2718
Meena wrote:
Tifl e Maktab wrote:
.
.
.
زندگی جب بھی تیری بزم میں لاتی ہے ہمیں
یہ زمیں چاند سے بہتر نظر آتی ہے ہمیں

سرخ پھولوں سے مہک اٹھتی ہیں دل کی راہیں
دن ڈھلے یوں تیری آواز بلاتی ہے ہمیں

یاد تیری ، کبھی دستک ، کبھی سرگوشی سے
رات کے پچھلے پہر روز جگاتی ہے ہمیں

ہر ملاقات کا انجام جدائی کیوں ہے ؟
اب تو ہر وقت یہی بات ستاتی ہے ہمیں


ye intikhaab bohut khoobsurat hai........... :)

meena


زندگی جب بھی تیری بزم میں لاتی ہے ہمیں
یہ زمیں چاند سے بہتر نظر آتی ہے ہمیں
wah.............
khubsurat intikhab :b)b:



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Sat Aug 25, 2012 9:15 am 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
میرے پہلو میں جو بہہ نکلے تمہارے آنسو
بن گئے شام محبت کے ستارے آنسو

دیکھ سکتا ہے بھلا کون یہ پیارے آنسو
میری آنکھوں میں نہ آ جائیں تمہارے آنسو

اپنا منہ گریباں میں چھپاتی کیوں ہو
دل کی دھڑکن کہیں سن لیں نہ تمہارے آنسو

شمع کا عکس جھلکتا ہے جو ہر آنسو میں
بن گئے بھیگی ہوئی رات کے تارے آنسو

مینہ کی بوندوں کی طرح ہو گئے سستے کیوں آج
موتیوں سے کہیں مہنگے تھے تمہارے آنسو

صاف اقرار محبت ہو زبان سے کیوں کر
آنکھ میں آ گئے یوں شرم کے مارے آنسو

ہجر ابھی دور ہے، میں پاس ہوں اے جان وفا
کیوں ہوئے جاتے ہیں بے چین تمہارے آنسو

صبح دم دیکھ نہ لے کوئی یہ بھیگا آنچل
میری چغلی کہیں کھا دیں نہ تمہارے آنسو

اپنے دامان و گریباں کو میں کیوں پیش کرو
ہیں میرے عشق کا انعام تمہارے آنسو

دم رخصت ہے قریب اے غم فرقت خوش ہو
کرنے والے ہیں جدائی کے اشارے آنسو

صدقے اس جان محبت کے میں اختر جس کے
رات بھر بہتے رہے شوق کے مارے آنسو


اختر شیرانی



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Aug 29, 2012 5:02 pm 
EverGreen Member
User avatar

Joined: Sun Jun 19, 2005 10:34 pm
Posts: 4033
Location: England
Tifl e Maktab wrote:
میرے پہلو میں جو بہہ نکلے تمہارے آنسو
بن گئے شام محبت کے ستارے آنسو

دیکھ سکتا ہے بھلا کون یہ پیارے آنسو
میری آنکھوں میں نہ آ جائیں تمہارے آنسو

اپنا منہ گریباں میں چھپاتی کیوں ہو
دل کی دھڑکن کہیں سن لیں نہ تمہارے آنسو

شمع کا عکس جھلکتا ہے جو ہر آنسو میں
بن گئے بھیگی ہوئی رات کے تارے آنسو

مینہ کی بوندوں کی طرح ہو گئے سستے کیوں آج
موتیوں سے کہیں مہنگے تھے تمہارے آنسو

صاف اقرار محبت ہو زبان سے کیوں کر
آنکھ میں آ گئے یوں شرم کے مارے آنسو

ہجر ابھی دور ہے، میں پاس ہوں اے جان وفا
کیوں ہوئے جاتے ہیں بے چین تمہارے آنسو

صبح دم دیکھ نہ لے کوئی یہ بھیگا آنچل
میری چغلی کہیں کھا دیں نہ تمہارے آنسو

اپنے دامان و گریباں کو میں کیوں پیش کرو
ہیں میرے عشق کا انعام تمہارے آنسو

دم رخصت ہے قریب اے غم فرقت خوش ہو
کرنے والے ہیں جدائی کے اشارے آنسو

صدقے اس جان محبت کے میں اختر جس کے
رات بھر بہتے رہے شوق کے مارے آنسو


اختر شیرانی


wahhh...wahhh...wahhhhh.....aik khoobsurat kalaam...... Kitab e Dil....sai.... :)

thanks for sharing...... :)O

meena



_________________
Image

Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Sep 12, 2012 12:07 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
"اندیشے"

اِس عُمر میں پھر عشق کا آزار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

شرماتے ہوئے، پیار میں ہر انگ بسائے
بالوں کو بکھیرے کبھی بالوں کو بنائے
بچپن میں جوانی کی ادائوں کو چھپائے
آجاتی ہے وہ دوڑتی ہنستی ہوئی ہر روز

ہر روز کئی بار کسی ایک بہانے
خاور کو بلانے کبھی سلمیٰ کو کھلانے
یا کوئی محلے کی نئی بات سنانے
یا دیکھنے باجی کے کشیدے کے نمونے

ہر بار مگر اک نئے انداز سے آنا
آنکھوں کو جھگائے ہوئے نظروں کو اٹھانا
چنری کے لٹکتے ہوئے کونے کو نچانا
یا چومنا خاور کو مگر دیکھنا مجھ کو

اُس غنچے میں شوخی بھی ہے معصوم ادا بھی
بچپن بھی لڑکپن بھی جوانی کا نشہ بھی
باتوں میں شرارت بھی ہے آنکھوں‌میں‌حیا بھی
اک شاخ پہ سو قسم کے گل جیسے کھلے ہوں

جیسے مجھے ماضی سے کوئی چاند بلائے
یا خواب میں گھٹتے ہوئے بڑھتے ہوئے سائے
یا جیسے کوئی شعر سمجھ میں جو نہ آئے
کچھ روز سے ایسے کچھ خیالوں میں گِھرا ہوں

ظلمت میں خیالِ شبِ مہتاب کی صورت
بے ساز کے بُھولے ہوئے مضراب کی صورت
ہے زندگی ٹھہرے ہوئے تالاب کی صورت
حیراں ہوں یہاں کیسے کوئی لہر اُٹھے گی

ویسے تو ہے موجود کنارہ بھی، ندی بھی
کچھ تھوڑی سی عزت بھی ہے ، فرصت بھی خوشی بھی
بیوی کی محبت بھی ہے بچوں کی ہنسی بھی
ان میں مگر آنکھوں کو وہ مرکز نہیں ملتا

جو زیست کے انگاروں کو بجھنے سے بچالے
بخشے جو غمِ دہر کی ظلمت کو اُجا لے
جو عقل کی رسی کرے مستی کے حوالے
جو زرے کو خورشید کی موجوں سے لڑا لے

اک برف سے ٹھہرائو ہے جذبات پہ طاری
لیکن ابھی ندی مری سانسوں کی ہے جاری
بن جاوں گر اس چھوٹی سی لڑکی کا پچاری
شاید وہ تڑپ بخش دے بے روح فضا کو

لیکن مری آنکھوں کو کو تو بہنے کی ہے عادت
شاید وہ نہ دیں دل کو ٹھہرنے کی اجازت
کچھ اور بگڑ جائے نہ بگڑی ہوئی حالت

بے چین طبیعت کہیں بیمار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

سعید احمد‌اختر
دیارِ شب



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Sep 12, 2012 6:40 pm 
EverGreen Member
User avatar

Joined: Sun Jun 19, 2005 10:34 pm
Posts: 4033
Location: England
Tifl e Maktab wrote:
"اندیشے"

اِس عُمر میں پھر عشق کا آزار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

شرماتے ہوئے، پیار میں ہر انگ بسائے
بالوں کو بکھیرے کبھی بالوں کو بنائے
بچپن میں جوانی کی ادائوں کو چھپائے
آجاتی ہے وہ دوڑتی ہنستی ہوئی ہر روز

ہر روز کئی بار کسی ایک بہانے
خاور کو بلانے کبھی سلمیٰ کو کھلانے
یا کوئی محلے کی نئی بات سنانے
یا دیکھنے باجی کے کشیدے کے نمونے

ہر بار مگر اک نئے انداز سے آنا
آنکھوں کو جھگائے ہوئے نظروں کو اٹھانا
چنری کے لٹکتے ہوئے کونے کو نچانا
یا چومنا خاور کو مگر دیکھنا مجھ کو

اُس غنچے میں شوخی بھی ہے معصوم ادا بھی
بچپن بھی لڑکپن بھی جوانی کا نشہ بھی
باتوں میں شرارت بھی ہے آنکھوں‌میں‌حیا بھی
اک شاخ پہ سو قسم کے گل جیسے کھلے ہوں

جیسے مجھے ماضی سے کوئی چاند بلائے
یا خواب میں گھٹتے ہوئے بڑھتے ہوئے سائے
یا جیسے کوئی شعر سمجھ میں جو نہ آئے
کچھ روز سے ایسے کچھ خیالوں میں گِھرا ہوں

ظلمت میں خیالِ شبِ مہتاب کی صورت
بے ساز کے بُھولے ہوئے مضراب کی صورت
ہے زندگی ٹھہرے ہوئے تالاب کی صورت
حیراں ہوں یہاں کیسے کوئی لہر اُٹھے گی

ویسے تو ہے موجود کنارہ بھی، ندی بھی
کچھ تھوڑی سی عزت بھی ہے ، فرصت بھی خوشی بھی
بیوی کی محبت بھی ہے بچوں کی ہنسی بھی
ان میں مگر آنکھوں کو وہ مرکز نہیں ملتا

جو زیست کے انگاروں کو بجھنے سے بچالے
بخشے جو غمِ دہر کی ظلمت کو اُجا لے
جو عقل کی رسی کرے مستی کے حوالے
جو زرے کو خورشید کی موجوں سے لڑا لے

اک برف سے ٹھہرائو ہے جذبات پہ طاری
لیکن ابھی ندی مری سانسوں کی ہے جاری
بن جاوں گر اس چھوٹی سی لڑکی کا پچاری
شاید وہ تڑپ بخش دے بے روح فضا کو

لیکن مری آنکھوں کو کو تو بہنے کی ہے عادت
شاید وہ نہ دیں دل کو ٹھہرنے کی اجازت
کچھ اور بگڑ جائے نہ بگڑی ہوئی حالت

بے چین طبیعت کہیں بیمار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

سعید احمد‌اختر
دیارِ شب


wahhh..... :)

bhut.... bhut....bhut shukriya........aik mukammal nazm paish kernay ka..... :)

bless you!!

meena



_________________
Image

Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Sep 12, 2012 6:43 pm 
EverGreen Member
User avatar

Joined: Sun Jun 19, 2005 10:34 pm
Posts: 4033
Location: England
Tifl e Maktab wrote:
"اندیشے"


لیکن مری آنکھوں کو کو تو بہنے کی ہے عادت
شاید وہ نہ دیں دل کو ٹھہرنے کی اجازت
کچھ اور بگڑ جائے نہ بگڑی ہوئی حالت

بے چین طبیعت کہیں بیمار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

سعید احمد‌اختر
دیارِ شب



_________________
Image

Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Thu Dec 19, 2013 4:05 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Sat Dec 27, 2008 1:39 pm
Posts: 5544
غالب
دود سودائے تُتق بست آسماں نامیدمش
دیدہ بر خوابِ پریشان زد، جہاں نامیدمش
صوفی تبسم۔ منظوم ترجمہ
دود افسون نظر تھا، آسماں کہنا پڑا
ایک پریشاں خواب دیکھا اور جہاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
وہم خاکے ریخت در چشمم بیاباں دیدمش
قطرہ بگداخت، بحرِ بیکراں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا غبارِ وہم وہ، میں نے بیاباں کہہ دیا
تھا گداز قطرہ، بحرِ بیکراں کہنا پڑا

شعرِ غالب
باد دامن زد بر آتش نو بہاراں خواندمش
داغ گشت آں شعلہ، از مستی خزاں نامیدمش
تبسم، منظوم
آگ بھڑکائی ہوا نے، میں اسے سمجھا بہار
شعلہ بن کر داغ جب ابھرا خزاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
قطرہٴ خونے گرہ گردید، دل دانستمش
موجِ زہرابے بہ طوفاں زد زباں نامیدمش تبسم
تبسم، منظوم
قطرۂ خوں کا تھا پیچ و تاب، دل جانا اسے
لہر تھی زہراب غم کی اور زباں کہنا پڑا

شعرِ غالب
غربتم نا سازگار آمد، وطن فہمیدمش
کرد تنگی حلقہء دام آشیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
ناموافق تھی بہت غربت، وطن کہتے بنی
تنگ نکلا حلقہء دام آشیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود در پہلو بہ تمکینے کہ دل می گفتمش
رفت از شوخی بہ آئینے کہ جاں نامیدمش
تبسم، منظوم
اس طرح پہلو میں آ بیٹھا کہ جیسے دل تھا وہ
اس روش سے وہ گیا اٹھ کر کہ جاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
ہر چہ از جاں کاست در مستی بہ سود افزودمش
ہرچہ با من ماند از ہستی زیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
کٹ گئی جو عمر مستی میں وہی تھا سودِ زیست
بچ رہا جو کچھ بھی مستی میں زیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
تا ز من بگسست عمرے، خوشدلش پنداشتم
چو بہ من پیوست لختے، بد گماں نامیدمش
عدنی
مہرباں سمجھا کیا جب تک رہا وہ مجھ سے دور
اور قریب آیا تو اس کو بد گماں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
اُو بہ فکر کشتنِ من بود، آہ از من کہ من
لاابالی خواندمش، نامہرباں نامیدمش
عدنی
گھات میں تھا قتل کی وہ اور اسے سمجھے بغیر
لا ابالی بے خبر، نا مہرباں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
تانہم بروے سپاس خدمتے از خویشتن
بود صاحب خانہ امّا میہماں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا مجھے منظور اسے مرہونِ منت دیکھنا
تھا وہ صاحب خانہ لیکن میہماں کہنا پڑا

شعرِ غالب
دل زباں را راز دان آشنائی ہا نخواست
گاہ بہماں گفتمش، گاہے فلاں نامیدمش
میرا دل نہیں چاہتا تھا کہ میری زباں محبت اور دوستی کی رازداں ہو اس لیے جب بھی محبوب کا تذکرہ آیا میں نے اسے کبھی فلاں، کبھی فلاں کہا۔

شعرِ غالب
ہم نگہ جاں می ستاند، ہم تغافل می کشد
آں دمِ شمشیر و ایں پشتِ کماں نامیدمش
تبسم
اسکا التفات بھی جاں ستاں ہے اور اسکا تغافل بھی مار ڈالتا ہے۔ اسکی توجہ تلوار کی دھار ہے اور اسکی بظاہر بے التفاتی پشتِ کمان کی طرح ہے کہ جس سے تیر نکل کر زخم لگاتا ہے۔

شعرِ غالب
در سلوک از ہر چہ پیش آمد گزشتن داشتم
کعبہ دیدم نقش پائے رہرواں نامیدمش
تبسم، منظوم
یوں طریقت میں ہر اک شے سے نظر آگے پڑی
کعبے کو بھی نقش پائے رہرواں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بر امیدِ شیوہء صبر آزمائی زیستم
تو بریدی از من و من امتحاں نامیدمش
تبسم، منظوم
شیوہء صبر آزمائی پر ترے جیتا تھا میں
یوں تری فرقت کو اپنا امتحاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود غالب عندلیبے از گلستانِ عجم
من ز غفلت طوطیِ ہندوستاں نامیدمش
تبسم
غالب تو گلستانِ ایران کی ایک بلبل تھا، میں نے غفلت میں اسے طوطیِ ہندوستاں کہہ دیا۔



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Thu Dec 19, 2013 8:09 pm 
Special Super Dooper Member
User avatar

Joined: Sat Dec 10, 2005 6:13 am
Posts: 43724
Location: London
wahhhhh !!! jawaab nahi...lajawaab kalam aur ba-kamal tarjuma ....kiya baat hae....nadir heera ho jaesay....buhat shandaar kavish ...aapka shukria...
khush rahain asad :dua



_________________
Image
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Fri Dec 20, 2013 2:22 am 
Moderator
User avatar

Joined: Sun Dec 02, 2007 5:08 am
Posts: 17677
Location: Data Ke Nagri
Tifl e Maktab wrote:
غالب
دود سودائے تُتق بست آسماں نامیدمش
دیدہ بر خوابِ پریشان زد، جہاں نامیدمش
صوفی تبسم۔ منظوم ترجمہ
دود افسون نظر تھا، آسماں کہنا پڑا
ایک پریشاں خواب دیکھا اور جہاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
وہم خاکے ریخت در چشمم بیاباں دیدمش
قطرہ بگداخت، بحرِ بیکراں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا غبارِ وہم وہ، میں نے بیاباں کہہ دیا
تھا گداز قطرہ، بحرِ بیکراں کہنا پڑا

شعرِ غالب
باد دامن زد بر آتش نو بہاراں خواندمش
داغ گشت آں شعلہ، از مستی خزاں نامیدمش
تبسم، منظوم
آگ بھڑکائی ہوا نے، میں اسے سمجھا بہار
شعلہ بن کر داغ جب ابھرا خزاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
قطرہٴ خونے گرہ گردید، دل دانستمش
موجِ زہرابے بہ طوفاں زد زباں نامیدمش تبسم
تبسم، منظوم
قطرۂ خوں کا تھا پیچ و تاب، دل جانا اسے
لہر تھی زہراب غم کی اور زباں کہنا پڑا

شعرِ غالب
غربتم نا سازگار آمد، وطن فہمیدمش
کرد تنگی حلقہء دام آشیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
ناموافق تھی بہت غربت، وطن کہتے بنی
تنگ نکلا حلقہء دام آشیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود در پہلو بہ تمکینے کہ دل می گفتمش
رفت از شوخی بہ آئینے کہ جاں نامیدمش
تبسم، منظوم
اس طرح پہلو میں آ بیٹھا کہ جیسے دل تھا وہ
اس روش سے وہ گیا اٹھ کر کہ جاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
ہر چہ از جاں کاست در مستی بہ سود افزودمش
ہرچہ با من ماند از ہستی زیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
کٹ گئی جو عمر مستی میں وہی تھا سودِ زیست
بچ رہا جو کچھ بھی مستی میں زیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
تا ز من بگسست عمرے، خوشدلش پنداشتم
چو بہ من پیوست لختے، بد گماں نامیدمش
عدنی
مہرباں سمجھا کیا جب تک رہا وہ مجھ سے دور
اور قریب آیا تو اس کو بد گماں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
اُو بہ فکر کشتنِ من بود، آہ از من کہ من
لاابالی خواندمش، نامہرباں نامیدمش
عدنی
گھات میں تھا قتل کی وہ اور اسے سمجھے بغیر
لا ابالی بے خبر، نا مہرباں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
تانہم بروے سپاس خدمتے از خویشتن
بود صاحب خانہ امّا میہماں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا مجھے منظور اسے مرہونِ منت دیکھنا
تھا وہ صاحب خانہ لیکن میہماں کہنا پڑا

شعرِ غالب
دل زباں را راز دان آشنائی ہا نخواست
گاہ بہماں گفتمش، گاہے فلاں نامیدمش
میرا دل نہیں چاہتا تھا کہ میری زباں محبت اور دوستی کی رازداں ہو اس لیے جب بھی محبوب کا تذکرہ آیا میں نے اسے کبھی فلاں، کبھی فلاں کہا۔

شعرِ غالب
ہم نگہ جاں می ستاند، ہم تغافل می کشد
آں دمِ شمشیر و ایں پشتِ کماں نامیدمش
تبسم
اسکا التفات بھی جاں ستاں ہے اور اسکا تغافل بھی مار ڈالتا ہے۔ اسکی توجہ تلوار کی دھار ہے اور اسکی بظاہر بے التفاتی پشتِ کمان کی طرح ہے کہ جس سے تیر نکل کر زخم لگاتا ہے۔

شعرِ غالب
در سلوک از ہر چہ پیش آمد گزشتن داشتم
کعبہ دیدم نقش پائے رہرواں نامیدمش
تبسم، منظوم
یوں طریقت میں ہر اک شے سے نظر آگے پڑی
کعبے کو بھی نقش پائے رہرواں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بر امیدِ شیوہء صبر آزمائی زیستم
تو بریدی از من و من امتحاں نامیدمش
تبسم، منظوم
شیوہء صبر آزمائی پر ترے جیتا تھا میں
یوں تری فرقت کو اپنا امتحاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود غالب عندلیبے از گلستانِ عجم
من ز غفلت طوطیِ ہندوستاں نامیدمش
تبسم
غالب تو گلستانِ ایران کی ایک بلبل تھا، میں نے غفلت میں اسے طوطیِ ہندوستاں کہہ دیا۔

bohat aala !!! ... lajawab :b)b:



_________________
Image

Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Sat Dec 28, 2013 5:50 pm 
Super Dooper Member

Joined: Fri Jun 18, 2010 10:52 am
Posts: 37048
Tifl e Maktab wrote:
غالب
دود سودائے تُتق بست آسماں نامیدمش
دیدہ بر خوابِ پریشان زد، جہاں نامیدمش
صوفی تبسم۔ منظوم ترجمہ
دود افسون نظر تھا، آسماں کہنا پڑا
ایک پریشاں خواب دیکھا اور جہاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
وہم خاکے ریخت در چشمم بیاباں دیدمش
قطرہ بگداخت، بحرِ بیکراں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا غبارِ وہم وہ، میں نے بیاباں کہہ دیا
تھا گداز قطرہ، بحرِ بیکراں کہنا پڑا

شعرِ غالب
باد دامن زد بر آتش نو بہاراں خواندمش
داغ گشت آں شعلہ، از مستی خزاں نامیدمش
تبسم، منظوم
آگ بھڑکائی ہوا نے، میں اسے سمجھا بہار
شعلہ بن کر داغ جب ابھرا خزاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
قطرہٴ خونے گرہ گردید، دل دانستمش
موجِ زہرابے بہ طوفاں زد زباں نامیدمش تبسم
تبسم، منظوم
قطرۂ خوں کا تھا پیچ و تاب، دل جانا اسے
لہر تھی زہراب غم کی اور زباں کہنا پڑا

شعرِ غالب
غربتم نا سازگار آمد، وطن فہمیدمش
کرد تنگی حلقہء دام آشیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
ناموافق تھی بہت غربت، وطن کہتے بنی
تنگ نکلا حلقہء دام آشیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود در پہلو بہ تمکینے کہ دل می گفتمش
رفت از شوخی بہ آئینے کہ جاں نامیدمش
تبسم، منظوم
اس طرح پہلو میں آ بیٹھا کہ جیسے دل تھا وہ
اس روش سے وہ گیا اٹھ کر کہ جاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
ہر چہ از جاں کاست در مستی بہ سود افزودمش
ہرچہ با من ماند از ہستی زیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
کٹ گئی جو عمر مستی میں وہی تھا سودِ زیست
بچ رہا جو کچھ بھی مستی میں زیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
تا ز من بگسست عمرے، خوشدلش پنداشتم
چو بہ من پیوست لختے، بد گماں نامیدمش
عدنی
مہرباں سمجھا کیا جب تک رہا وہ مجھ سے دور
اور قریب آیا تو اس کو بد گماں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
اُو بہ فکر کشتنِ من بود، آہ از من کہ من
لاابالی خواندمش، نامہرباں نامیدمش
عدنی
گھات میں تھا قتل کی وہ اور اسے سمجھے بغیر
لا ابالی بے خبر، نا مہرباں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
تانہم بروے سپاس خدمتے از خویشتن
بود صاحب خانہ امّا میہماں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا مجھے منظور اسے مرہونِ منت دیکھنا
تھا وہ صاحب خانہ لیکن میہماں کہنا پڑا

شعرِ غالب
دل زباں را راز دان آشنائی ہا نخواست
گاہ بہماں گفتمش، گاہے فلاں نامیدمش
میرا دل نہیں چاہتا تھا کہ میری زباں محبت اور دوستی کی رازداں ہو اس لیے جب بھی محبوب کا تذکرہ آیا میں نے اسے کبھی فلاں، کبھی فلاں کہا۔

شعرِ غالب
ہم نگہ جاں می ستاند، ہم تغافل می کشد
آں دمِ شمشیر و ایں پشتِ کماں نامیدمش
تبسم
اسکا التفات بھی جاں ستاں ہے اور اسکا تغافل بھی مار ڈالتا ہے۔ اسکی توجہ تلوار کی دھار ہے اور اسکی بظاہر بے التفاتی پشتِ کمان کی طرح ہے کہ جس سے تیر نکل کر زخم لگاتا ہے۔

شعرِ غالب
در سلوک از ہر چہ پیش آمد گزشتن داشتم
کعبہ دیدم نقش پائے رہرواں نامیدمش
تبسم، منظوم
یوں طریقت میں ہر اک شے سے نظر آگے پڑی
کعبے کو بھی نقش پائے رہرواں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بر امیدِ شیوہء صبر آزمائی زیستم
تو بریدی از من و من امتحاں نامیدمش
تبسم، منظوم
شیوہء صبر آزمائی پر ترے جیتا تھا میں
یوں تری فرقت کو اپنا امتحاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود غالب عندلیبے از گلستانِ عجم
من ز غفلت طوطیِ ہندوستاں نامیدمش
تبسم
غالب تو گلستانِ ایران کی ایک بلبل تھا، میں نے غفلت میں اسے طوطیِ ہندوستاں کہہ دیا۔

aala adabi zoq ki tarjumani kerti sharing... daad qubool kijiye... :)O



_________________
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jan 22, 2014 12:01 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Wed Apr 29, 2009 12:42 pm
Posts: 6113
Location: *Mehsoos kijiye in HAWAON main hon
Tifl e Maktab wrote:
غالب
دود سودائے تُتق بست آسماں نامیدمش
دیدہ بر خوابِ پریشان زد، جہاں نامیدمش
صوفی تبسم۔ منظوم ترجمہ
دود افسون نظر تھا، آسماں کہنا پڑا
ایک پریشاں خواب دیکھا اور جہاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
وہم خاکے ریخت در چشمم بیاباں دیدمش
قطرہ بگداخت، بحرِ بیکراں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا غبارِ وہم وہ، میں نے بیاباں کہہ دیا
تھا گداز قطرہ، بحرِ بیکراں کہنا پڑا

شعرِ غالب
باد دامن زد بر آتش نو بہاراں خواندمش
داغ گشت آں شعلہ، از مستی خزاں نامیدمش
تبسم، منظوم
آگ بھڑکائی ہوا نے، میں اسے سمجھا بہار
شعلہ بن کر داغ جب ابھرا خزاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
قطرہٴ خونے گرہ گردید، دل دانستمش
موجِ زہرابے بہ طوفاں زد زباں نامیدمش تبسم
تبسم، منظوم
قطرۂ خوں کا تھا پیچ و تاب، دل جانا اسے
لہر تھی زہراب غم کی اور زباں کہنا پڑا

شعرِ غالب
غربتم نا سازگار آمد، وطن فہمیدمش
کرد تنگی حلقہء دام آشیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
ناموافق تھی بہت غربت، وطن کہتے بنی
تنگ نکلا حلقہء دام آشیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود در پہلو بہ تمکینے کہ دل می گفتمش
رفت از شوخی بہ آئینے کہ جاں نامیدمش
تبسم، منظوم
اس طرح پہلو میں آ بیٹھا کہ جیسے دل تھا وہ
اس روش سے وہ گیا اٹھ کر کہ جاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
ہر چہ از جاں کاست در مستی بہ سود افزودمش
ہرچہ با من ماند از ہستی زیاں نامیدمش
تبسم، منظوم
کٹ گئی جو عمر مستی میں وہی تھا سودِ زیست
بچ رہا جو کچھ بھی مستی میں زیاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
تا ز من بگسست عمرے، خوشدلش پنداشتم
چو بہ من پیوست لختے، بد گماں نامیدمش
عدنی
مہرباں سمجھا کیا جب تک رہا وہ مجھ سے دور
اور قریب آیا تو اس کو بد گماں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
اُو بہ فکر کشتنِ من بود، آہ از من کہ من
لاابالی خواندمش، نامہرباں نامیدمش
عدنی
گھات میں تھا قتل کی وہ اور اسے سمجھے بغیر
لا ابالی بے خبر، نا مہرباں کہتا تھا میں

شعرِ غالب
تانہم بروے سپاس خدمتے از خویشتن
بود صاحب خانہ امّا میہماں نامیدمش
تبسم، منظوم
تھا مجھے منظور اسے مرہونِ منت دیکھنا
تھا وہ صاحب خانہ لیکن میہماں کہنا پڑا

شعرِ غالب
دل زباں را راز دان آشنائی ہا نخواست
گاہ بہماں گفتمش، گاہے فلاں نامیدمش
میرا دل نہیں چاہتا تھا کہ میری زباں محبت اور دوستی کی رازداں ہو اس لیے جب بھی محبوب کا تذکرہ آیا میں نے اسے کبھی فلاں، کبھی فلاں کہا۔

شعرِ غالب
ہم نگہ جاں می ستاند، ہم تغافل می کشد
آں دمِ شمشیر و ایں پشتِ کماں نامیدمش
تبسم
اسکا التفات بھی جاں ستاں ہے اور اسکا تغافل بھی مار ڈالتا ہے۔ اسکی توجہ تلوار کی دھار ہے اور اسکی بظاہر بے التفاتی پشتِ کمان کی طرح ہے کہ جس سے تیر نکل کر زخم لگاتا ہے۔

شعرِ غالب
در سلوک از ہر چہ پیش آمد گزشتن داشتم
کعبہ دیدم نقش پائے رہرواں نامیدمش
تبسم، منظوم
یوں طریقت میں ہر اک شے سے نظر آگے پڑی
کعبے کو بھی نقش پائے رہرواں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بر امیدِ شیوہء صبر آزمائی زیستم
تو بریدی از من و من امتحاں نامیدمش
تبسم، منظوم
شیوہء صبر آزمائی پر ترے جیتا تھا میں
یوں تری فرقت کو اپنا امتحاں کہنا پڑا

شعرِ غالب
بود غالب عندلیبے از گلستانِ عجم
من ز غفلت طوطیِ ہندوستاں نامیدمش
تبسم
غالب تو گلستانِ ایران کی ایک بلبل تھا، میں نے غفلت میں اسے طوطیِ ہندوستاں کہہ دیا۔



zaberdast Tifl e Maktab jee khush rahein abad rahaein



_________________
Image
Image
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jan 22, 2014 12:53 pm 
Moderator
User avatar

Joined: Tue Jun 14, 2011 11:13 pm
Posts: 4607
Location: DG KHAN
Tifl e Maktab wrote:
"اندیشے"

اِس عُمر میں پھر عشق کا آزار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

شرماتے ہوئے، پیار میں ہر انگ بسائے
بالوں کو بکھیرے کبھی بالوں کو بنائے
بچپن میں جوانی کی ادائوں کو چھپائے
آجاتی ہے وہ دوڑتی ہنستی ہوئی ہر روز

ہر روز کئی بار کسی ایک بہانے
خاور کو بلانے کبھی سلمیٰ کو کھلانے
یا کوئی محلے کی نئی بات سنانے
یا دیکھنے باجی کے کشیدے کے نمونے

ہر بار مگر اک نئے انداز سے آنا
آنکھوں کو جھگائے ہوئے نظروں کو اٹھانا
چنری کے لٹکتے ہوئے کونے کو نچانا
یا چومنا خاور کو مگر دیکھنا مجھ کو

اُس غنچے میں شوخی بھی ہے معصوم ادا بھی
بچپن بھی لڑکپن بھی جوانی کا نشہ بھی
باتوں میں شرارت بھی ہے آنکھوں‌میں‌حیا بھی
اک شاخ پہ سو قسم کے گل جیسے کھلے ہوں

جیسے مجھے ماضی سے کوئی چاند بلائے
یا خواب میں گھٹتے ہوئے بڑھتے ہوئے سائے
یا جیسے کوئی شعر سمجھ میں جو نہ آئے
کچھ روز سے ایسے کچھ خیالوں میں گِھرا ہوں

ظلمت میں خیالِ شبِ مہتاب کی صورت
بے ساز کے بُھولے ہوئے مضراب کی صورت
ہے زندگی ٹھہرے ہوئے تالاب کی صورت
حیراں ہوں یہاں کیسے کوئی لہر اُٹھے گی

ویسے تو ہے موجود کنارہ بھی، ندی بھی
کچھ تھوڑی سی عزت بھی ہے ، فرصت بھی خوشی بھی
بیوی کی محبت بھی ہے بچوں کی ہنسی بھی
ان میں مگر آنکھوں کو وہ مرکز نہیں ملتا

جو زیست کے انگاروں کو بجھنے سے بچالے
بخشے جو غمِ دہر کی ظلمت کو اُجا لے
جو عقل کی رسی کرے مستی کے حوالے
جو زرے کو خورشید کی موجوں سے لڑا لے


لیکن مری آنکھوں کو کو تو بہنے کی ہے عادت
شاید وہ نہ دیں دل کو ٹھہرنے کی اجازت
کچھ اور بگڑ جائے نہ بگڑی ہوئی حالت

بے چین طبیعت کہیں بیمار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

سعید احمد‌اختر
دیارِ شب


bahut khobsorat



_________________
Image

اگر غم سے بهی آگ کی طرح دهواں نکلتا تو جہاں ہمیشہ تاریک رہتا
Offline
 Profile  
 
 Post subject: Re: Kitab e Dil
PostPosted: Wed Jan 22, 2014 4:43 pm 
Baby Addict Member
User avatar

Joined: Wed Apr 29, 2009 12:42 pm
Posts: 6113
Location: *Mehsoos kijiye in HAWAON main hon
Tifl e Maktab wrote:
"اندیشے"

اِس عُمر میں پھر عشق کا آزار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

شرماتے ہوئے، پیار میں ہر انگ بسائے
بالوں کو بکھیرے کبھی بالوں کو بنائے
بچپن میں جوانی کی ادائوں کو چھپائے
آجاتی ہے وہ دوڑتی ہنستی ہوئی ہر روز

ہر روز کئی بار کسی ایک بہانے
خاور کو بلانے کبھی سلمیٰ کو کھلانے
یا کوئی محلے کی نئی بات سنانے
یا دیکھنے باجی کے کشیدے کے نمونے

ہر بار مگر اک نئے انداز سے آنا
آنکھوں کو جھگائے ہوئے نظروں کو اٹھانا
چنری کے لٹکتے ہوئے کونے کو نچانا
یا چومنا خاور کو مگر دیکھنا مجھ کو

اُس غنچے میں شوخی بھی ہے معصوم ادا بھی
بچپن بھی لڑکپن بھی جوانی کا نشہ بھی
باتوں میں شرارت بھی ہے آنکھوں‌میں‌حیا بھی
اک شاخ پہ سو قسم کے گل جیسے کھلے ہوں

جیسے مجھے ماضی سے کوئی چاند بلائے
یا خواب میں گھٹتے ہوئے بڑھتے ہوئے سائے
یا جیسے کوئی شعر سمجھ میں جو نہ آئے
کچھ روز سے ایسے کچھ خیالوں میں گِھرا ہوں

ظلمت میں خیالِ شبِ مہتاب کی صورت
بے ساز کے بُھولے ہوئے مضراب کی صورت
ہے زندگی ٹھہرے ہوئے تالاب کی صورت
حیراں ہوں یہاں کیسے کوئی لہر اُٹھے گی

ویسے تو ہے موجود کنارہ بھی، ندی بھی
کچھ تھوڑی سی عزت بھی ہے ، فرصت بھی خوشی بھی
بیوی کی محبت بھی ہے بچوں کی ہنسی بھی
ان میں مگر آنکھوں کو وہ مرکز نہیں ملتا

جو زیست کے انگاروں کو بجھنے سے بچالے
بخشے جو غمِ دہر کی ظلمت کو اُجا لے
جو عقل کی رسی کرے مستی کے حوالے
جو زرے کو خورشید کی موجوں سے لڑا لے

اک برف سے ٹھہرائو ہے جذبات پہ طاری
لیکن ابھی ندی مری سانسوں کی ہے جاری
بن جاوں گر اس چھوٹی سی لڑکی کا پچاری
شاید وہ تڑپ بخش دے بے روح فضا کو

لیکن مری آنکھوں کو کو تو بہنے کی ہے عادت
شاید وہ نہ دیں دل کو ٹھہرنے کی اجازت
کچھ اور بگڑ جائے نہ بگڑی ہوئی حالت

بے چین طبیعت کہیں بیمار نہ ہو جائے
اک چھوٹی سی لڑکی سے کہیں پیار نہ ہو جائے

سعید احمد‌اختر
دیارِ شب


zaberdast awesome Tifl e Maktab jee :buke:



_________________
Image
Image
Offline
 Profile  
 
Display posts from previous:  Sort by  
 Page 10 of 10 [ 390 posts ]  Go to page Previous  1 ... 6, 7, 8, 9, 10

All times are UTC + 5 hours


Who is online

Users browsing this forum: No registered users and 1 guest


You cannot post new topics in this forum
You cannot reply to topics in this forum
You cannot edit your posts in this forum
You cannot delete your posts in this forum
You cannot post attachments in this forum

Jump to: